Sun 20 Jm2 1435 - 20 April 2014
147053

شادی بیاہ میں پھولوں کے ہار پہننے کا حکم

شادی اور عقیقہ وغیرہ کی تقاریب میں پھولوں کے ہار پہننے کا کیا حکم ہے؟ ہمارے ہاں ہندوستان اور پاکستان میں یہ عمل بہت زیادہ ہے، تو کیا یہ بدعت ہے؟

الحمد للہ:

مسلمانوں نے کفار سے کچھ عادات لی ہیں جن میں بیماروں کیلئے پھول پیش کرنا ، مرنے والوں کی قبروں پر پھول چڑھانا شامل ہے، اور یہ دونوں کام گناہ ہیں، ایک تو اس اعتبار سے کہ یہ کفار کی رسم ہے، اور اس اعتبار سے بھی کہ یہ محض روپیہ پیسہ اڑانے والی بات ہے، کہ ان پھولوں کا کیا فائدہ جو کچھ ہی دیر کے بعد گل سڑ جاتے ہیں، اور اس سے نہ کسی زندہ کو فائدہ ہوتا ہےاور نہ ہی مردہ مستفید ہوتا ہے؟!

مزید کیلئے ان سوالوں کے جواب بھی ملاحظہ کریں: (1973) ، (14390) ، (85345)

دوسری بات :

بعض تحقیقی مقالہ نگاروں نے یہ بیان کیا ہے کہ پھولوں کے ہار پہننا اصل میں عیسائیوں سے لی ہوئی ایک رسم ہے، جو کہ گرجا گھروں میں ادا کی جاتی ہے، ایک تحقیقی مقالہ "التاج و الزهور" میں بیان کیا گیا ہےکہ:

"پھولوں کا تاج یا ہار اصل میں عیسائی گرجا گھر میں پہنتے ہیں، انکی کتابوں میں ہے کہ: مبارک باد دینے کے بعد جب نیا جوڑا گرجا گھر سے جانے لگتا تھا تو انہیں رسمی طور پر تاج یا پھولوں کا ہار بطورِ علامتِ فتح کے پہنایا جاتا ، اور یہ اس بات کی بھی علامت ہوتا کہ یہ دونوں پاکباز ہیں"

یہ اقتباس " تأملات ووقفات مع بعض مظاهر العرس " از ڈاکٹر فاطمہ بنت محمد آل جاراللہ سے لیا گیا ہے، اس کتاب کیلئے شیخ عبد الله بن جبرين رحمه الله ، اور عبدالرحمن المحمود حفظه الله نے تقریظ بھی لکھی ہے۔

اور شادی بیاہ ، عقیقہ یا دیگر تقریبات کیلئے پھولوں کے ہار پہننے میں کوئی فرق نہیں سب کا ایک ہی حکم ہے۔

قابل ذکر بات یہ بھی ہے کہ ہر علاقے اور ملک کے رسم و رواج دیگر علاقوں اور ملکوں سے مختلف ہوتے ہیں، چنانچہ اگر معاملہ ایسا ہی ہے جیسے یہاں ذکر ہوا ہے کہ یہ رسم اصل میں کفار (چاہے عیسائی ہوں یا کوئی اور)سے لی گئی ہے، یا یہ رسم تمام کفار یا ان میں سے کسی خاص گروہ مثلاً ہندؤوں کا شعار ہے، جیسے کہ ان کے بارے میں یہ کہا بھی گیا ہے، اگر تو معاملہ ایسے ہی ہے تو ہر وہ کام حرام ہوگا، جس سے کفار میں امتیاز کیا جاسکے، یا اس کام کا تعلق انکے مذہبی رسم و رواج سے ہو، یا اس کام سے کفار کی کسی بھی اعتبار سے مشابہت ہوتی ہو۔

واللہ اعلم .

اسلام سوال و جواب
Create Comments