Sat 19 Jm2 1435 - 19 April 2014
21705

جرابوں پر مسح كرنے كى مدت ختم ہونے كے بعد وضوء نہيں ٹوٹتا

ميں نے پڑھا ہے كہ موزوں ( يعنى جرابوں ) پر مقيم كے ليے مسح كرنے كى مدت ايك رات اور دن اور مسافر كے ليے تين راتيں اور تين دن ہے، ميرا سوال يہ ہے كہ آيا مسح كى مدت ختم ہونے پر وضوء ٹوٹ جاتا ہے يا نہيں ؟

الحمد للہ:

شيخ محمد بن عثيمين رحمہ اللہ تعالى كہتے ہيں:

صحيح يہى ہے كہ مسح كى مدت ختم ہونے سے ( وضوء ) نہيں ٹوٹتا يعنى مثلا اگر مسح كى مدت دوپہر گيارہ بجے ختم ہو رہى ہے اور رات تك آپ كا وضوء نہيں ٹوٹا تو آپ كى طہارت قائم ہے؛ اس ليے كہ مسح كى مدت ختم ہونے سے وضوء ٹوٹنے كى كوئى دليل نہيں.

اور پھر رسول كريم صلى اللہ عليہ وسلم نے مسح كرنے كى مدت اور وقت مقرر كيا ہے، طہارت كا وقت مقرر نہيں كيا، طالب علم كو اس قاعدہ پر متنبہ رہنا چاہيے كہ: جو شرعى دليل سے ثابت ہو وہ شرعى دليل كے بغير ختم نہيں ہوتا؛ كيونكہ اصل ميں وہ اس پر ہى باقى ہے جس پر تھا.

لقاء الباب المفتوح ملاقات نمبر چوبيس.
Create Comments