Thu 24 Jm2 1435 - 24 April 2014
36370

اس کے پاس مال نہيں ہے اورکسی دوسرے کی جانب سے معاوضہ کے ساتھ حج کرنا چاہتا ہے

ایک شخص نے اپنا فریضہ حج ادا نہيں کیا ، اورنہ ہی اس کے پاس حج کےلیے مال ہے ، توکیا اس کے لیے معاوضہ حاصل کرکے کسی میت یا بوڑھے کی جانب سے حج کرنا جائز ہے ؟

الحمد للہ
کسی شخص کےلیے جائز نہيں کہ وہ اپنا فریضہ حج ادا کیے بغیر کسی دوسرے کی جانب سے حج ادا کرے ، اس کی دلیل ابن عباس رضي اللہ تعالی عنہما کی مندرجہ ذیل حدیث ہے :

ابن عباس رضي اللہ تعالی عنہما بیان کرتے ہیں کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے سنا کہ ایک شخص کہ رہا تھا : لبیک عن شبرمہ میں شبرمہ کی طرف سے حاضر ہوں ، تونبی صلی اللہ علیہ وسلم فرمانے لگے :

کیا تونے اپنی طرف سے حج کی ادائيگي کرلی ہے ؟ وہ شخص کہنے لگا نہيں ، نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : اپنی طرف سے حج ادا کرو اورپھرشبرمہ کی جانب سے ادا کرنا ۔

اسے ابوداود نے روایت کیا ہے ، اورعلامہ البانی رحمہ اللہ تعالی نے ارواء الغلیل میں صحیح قراردیا ہے دیکھیں : الارواء ( 994 ) ۔

اللہ تعالی ہی توفیق بخشنے والا ہے ۔ .

فتاوی اللجنۃ الدائمۃ للبحوث العلمیۃ والافتاء ( 11 / 50 ) ۔
Create Comments