Sun 20 Jm2 1435 - 20 April 2014
37656

مانع حمل ٹیوب کے استعمال سے ماہواری کے ایام میں اضافہ

مانع حمل ٹیوب لگانے سے قبل ماہوار چھ دن تک رہتی تھی لیکن ٹیوب لگانے کے بعد ماہواری کی مدت نو دن ہوگئي ، اب ان زیادہ ایام میں نماز، روزہ کا حکم کیا ہوگا ؟

الحمد للہ :

ٹیوب کے بعد اگر ماہواری کے ایام میں اضافہ ہوجائے تو یہ بھی حیض ہی شمار ہوگا ، اس لیے عورت اس وقت تک نمازادا نہیں کرے گی اورنہ ہی روزہ رکھے گی جب تک کہ وہ طہر کی حالت میں نہ ہوجائے ۔

شیخ ابن عثیمین رحمہ اللہ تعالی سے مندرجہ ذيل سوال کیا گيا :

علاج کی وجہ سے ایک عورت کو حیض کا خون آنا شروع ہوگیا اوراس نے نماز تر ک کردی توکیا وہ ان نمازوں کی قضاء کرے گی کہ نہيں ؟

توشيخ رحمہ اللہ تعالی کا جواب تھا :

حیض کی وجہ سے ترک کی ہوئي نمازوں کی قضاء نہيں کرے گی ، کیونکہ جب بھی حیض آجائے اس کا حکم بھی پایا جائے گا ، جس طرح کہ اگر کوئی عورت مانع حيض گولیاں استعمال کرے توحیض نہ آنے پر وہ نماز بھی ادا کرے گي اورروزہ بھی رکھے گی کیونکہ وہ حائضہ نہيں ،اس لیے حکم تو علت کے ساتھ ہی پایا جائے گا ۔

اورپھر اللہ تعالی کا فرمان ہے :

{ اورآپ سے وہ حیض کے متعلق سوال کرتے ہيں ، آپ کہہ دیجیۓ کہ وہ گندگي ہے } البقرۃ ( 222 ) ۔

اس لیے جب بھی یہ گندگي پائي جائے اس کا حکم بھی ثابت ہوگا ، اورجب نہ ہواس کا حکم بھی نہيں ہوگا ۔ اھـ

دیکھیں : فتاوی ارکان الاسلام صفحہ ( 254 ) ۔

واللہ اعلم .

الاسلام سوال وجواب
Create Comments