Thu 17 Jm2 1435 - 17 April 2014
82994

عورتوں اور محرم مردوں كے سامنے عورت كا ستر

بہن اور بھائى كا آپس ميں كيا ستر ہے، اور ماں بيٹى اور بہن ميں ستر كيا ہے ؟

الحمد للہ:

اول:

عورت كا اپنے محرم مرد مثلا والد، بيٹا، اور بھائى كے سامنے مكمل بدن ستر ہے، صرف وہى ظاہر كر سكتى ہے جو غالبا ظاہر رہتى ہوں، مثلا چہرہ بال اور گردن، دونوں بازو، اور قدم.

اللہ سبحانہ و تعالى كا فرمان ہے:

﴿ اور وہ اپنى آرائش كو كسى كے سامنے ظاہر نہ كريں، سوائے اپنے خاوندوں كے، يا اپنے والد كے، يا اپنے خسر كے، يا اپنے لڑكوں كے، يا اپنے خاوند كے لڑكوں كے، يا اپنے بھائيوں كے، يا اپنے بھتيجوں كے، يا اپنے بھانجوں كے، يا اپنے ميل كى عورتوں كے.... ﴾النور ( 31 ).

چنانچہ اللہ سبحانہ و تعالى نے عورت كے ليے اپنى زينت كو اپنے خاوند، اور اپنے محرم مرد كے سامنے ظاہر كرنا مباح كي ہے، اور زينت سے مراد زينت والى جگہيں اور اعضاء ہيں، تو انگوٹھى كى جگہ ہتھيلى ہے، اور كنگن اور چوڑيوں كى جگہ بازو ہے، اور بالى كى جگہ كان ہيں، اور ہار كى جگہ گردن اور سينہ ہے، اور پازيب كى جگہ پنڈلياں ہيں.

ابو بكر جصاص رحمہ اللہ اپنى تفسير ميں كہتے ہيں:

اس سے ظاہر يہى ہوتا ہے كہ خاوند اور اس كے ساتھ ذكر كردہ محرم مردوں كے سامنے زينت كا اظہار كرنا مباح ہے، يہ معلوم ہے كہ زينت والى جگہيں چہرہ اور ہاتھ اور بازو ہيں.

..... ا سكا تقاضہ يہ ہے كہ آيت ميں مذكور اشخاص كا ان جگہوں كو ديكھنا مباح ہے، جو كہ باطنى زينت كے مقام ہيں؛ كيونكہ آيت كے شروع ميں اجنبيوں كے ليے ظاہرى زينت كو مباح كيا ہے، اور خاوند اور محرم مردوں كے ليے باطنى زينت كو ديكھنا مباح كيا ہے، اور ابن مسعود اور زبير رضى اللہ تعالى عنہم سے مروى ہے كہ اس سے مراد بالياں، ہار، كنگن اور پازيب ہيں.....

اور اسميں خاوند اور اس كے ساتھ ذكر كردہ كو برابر كيا ہے، تو اس عموم كا تقاضہ ہے كہ اس زينت والى جگہوں كو ان مذكورين كے ليے ديكھنا بھى اسى طرح مباح ہے جس طرح خاوند كے ليے " انتہى.

اور بغوى رحمہ اللہ كہتے ہيں:

قولہ تعالى:

﴿ اور وہ اپنى زينت ظاہر نہ كريں ﴾.

يعنى وہ اپنى زينت غير محرم كے ليے ظاہر نہ كريں، اور اس سے مراد خفيہ زينت ہے، ايك تو خفيہ زينت ہے، اور دوسرى ظاہرى، خفيہ زينت ميں پاؤں ميں پازيب، اور كلائى ميں كنگن، اور كانوں ميں بالياں، اور گردن ميں ہار شامل ہے، تو اجنبى شخص كے ليے يہ ظاہر كرنا جائز نہيں، اور نہ ہى اجنبى كے ليے ان مقامات كو ديكھنا مباح ہے، اور زينت سے مراد زينت والى جگہ ہے " انتہى.

اور كشاف القناع ميں لكھا ہے:

" اور محرم مرد كے ليے عورت كا چہرہ، گردن، ہاتھ، اور پاؤں، اور سر اور پنڈلى ديكھنى جائز ہے، قاضى رحمہ اللہ اس روايت پر كہتے ہيں: جو غالب ميں ظاہر ہوتا ہے مثلا سر، كہنيوں تك ہاتھ ديكھنا مباح ہيں " انتہى.

ديكھيں: كشاف القناع ( 5 / 11 ).

اور يہ محرم مرد قرب اور فتنہ سے امن كے متعلق ايك دوسرے سے فرق ركھتے ہيں، اسى ليے عورت اپنے والد كے ليے وہ كچھ ظاہر كرسكتى ہے جو اپنے خاوند كے بيٹے كے ليے ظاہر نہيں كرتى.

قرطبى رحمہ اللہ كہتے ہيں:

" جب اللہ سبحانہ و تعالى نے خاوندوں كا ذكر كيا اور ان سے ابتدا كى تو پھر اس كے بعد دوسرى چيز محرم مردوں كو ذكر كيا، اور ان سب كے سامنے زينت كے اظہار ميں برابرى بيان كى، ليكن نفس بشر ميں ان كے مختلف ہونے كى بنا پر ان كے مراتب بھى مختلف ہيں، اس ليے بلاشك عورت كا اپنے والد اور بھائى كے سامنے ان اعضاء كو ظاہر كرنا اپنے خاوند كے بيٹے كے سامنے ظاہر كرنے سے زيادہ محتاط ہے، اور ان كے ليے جو چيز ظاہر كى جائيگى اس كے مراتب مختلف ہيں، چنانچہ والد كے سامنے وہ كچھ ظاہر كرنا جائز ہے، جو اپنے خاوند كے بيٹے كے سامنے جائز نہيں " انتہى.

دوم:

فقھاء كے ہاں يہ بات مقرر كردہ ہے كہ عورت كا عورت كے سامنے ستر گھٹنے سے ليكر ناف تك ہے، چاہے وہ عورت بہن ہو يا كوئى اجنبى، اس ليے كسى بھى عورت كے ليے جائز نہيں كہ وہ اپنى بہن كے سامنے گھٹنے سے ليكر ناف تك كو ظاہر نہ كرے، ليكن شديد قسم كى ضرورت مثلا علاج معالجہ وغيرہ كے ليے ايسا كر سكتى ہے.

ا سكا يہ معنى نہيں كہ عورت دوسروں عورتوں كے سامنے گھٹنے اور ناف كے علاوہ باقى جسم ننگا كر كے بيٹھے، كيونكہ يہ تو وہ عورتيں ہى كرتى ہے جو بے پرد اور عفت و عصمت نہيں ركھتيں، يا پھر فاسق فاجر اور فاحش عورتوں كا كام ہے، اس ليے غلط سمجھ اور مفہوم نہيں لينا چاہيے.

فقھاء كا يہ قول:

" گھٹنے سے ناف تك ستر ہے "

ا نكى اس كلام ميں يہ نہيں كہ يہ عورتوں كا لباس ہے، جس پر وہ عمل كرے، اور اپنى سہيليوں اور دوسرى عورتوں كے سامنے ظاہر كرے يہ ايسى چيز ہے جس كا كوئى بھى عقل اقرار نہيں كرتى، اور نہ ہى فطرت سليمہ اس كى طرف بلاتى ہے.

بلكہ عورت كا اپنى بہن اور اپنى جنس كى دوسرى عورتوں كے سامنے لباس پورا ساتر اور بدن چھپانے والا اور عزت و حشمت پرمشتمل ہو، جو اس كى شرم و حياء اور وقار كى دليل بنے، كام كاج اور خدمت كرتے وقت جو اعضاء ظاہر ہوتے ہيں، مثلا سر، گردن، بازو، اور قدم كے علاوہ كچھ اور ظاہر نہ ہو، جيسا كہ ہم محرم كے مسئلہ ميں ذكر كر چكے ہيں.

مستقل فتوى كميٹى سعودى عرب كا بھى محرم مرد اور عورتوں كے سامنے عورت كے ليے كيا ظاہر كرنا جائز ہے كے متعلق ايك فتوى جارى ہوا ہے جسے ہم سوال نمبر ( 34745 ) كے جواب ميں نقل كر چكے ہيں، آپ اس كا مطالعہ كريں.

ہم اللہ تعالى سے اپنے اور آپ كے ليے سيدھى راہ اور اس پر ثابت قدمى كى دعا كرتے ہيں.

واللہ اعلم .

الاسلام سوال و جواب
Create Comments