ar

112155: بڑے چچا كى موجود ہونے كے باوجود چھوٹے چچا نے شادى كر دى


ايك كنوارى عورت كا نہ تو والد ہے اور نہ ہى بھائى، ليكن اس كے چچا ہيں، اس لڑكى كے ليے ايك شخص كا رشتہ آيا تو بڑے چچا كے موجود ہونے كے باوجود چھوٹے چچا نے اس كى شادى كر دى، كيا يہ نكاح صحيح ہے ؟

Published Date: 2012-01-15

الحمد للہ:

اگر تو واقعتاً ايسا ہى ہے كہ عورت كا باپ اور بھائى نہيں تھے، چنانچہ جب اس كے بھتيجے نہ ہوں تو عورت كے چھوٹے چچا كا اس عورت كى كسى اور سے شادى كرنا صحيح ہے، چاہے بڑا چچا موجود بھى ہو، ليكن شرط يہ ہے كہ چھوٹا چچا عاقل و بالغ ہو اور اس عورت كى شادى كفوء كے ساتھ لڑكى كى رضامندى سے كرے.

كيونكہ جب ولى درجہ اور رتبہ ميں برابر ہوں تو ان ميں سے كسى ايك كا بھى شادى كرنا صحيح ہے، صرف بڑى عمر والے كو مقدم كرنا مستحب ہے.

اللہ تعالى ہى توفيق دينے والا ہے " انتہى

فضيلۃ الشيخ محمد بن ابراہيم آل شيخ رحمہ اللہ .

ديكھيں: فتاوى الشيخ محمد بن ابراہيم ( 10 / 112 ).
Create Comments