منگل 13 رجب 1440 - 19 مارچ 2019
اردو

عورتوں كے ليے اونچى ايڑى والے جوتے پہننے كا حكم

26215

تاریخ اشاعت : 04-01-2008

مشاہدات : 5192

سوال

عورتوں كے ليے اونچى ايڑى والے جوتے پہننے كا حكم كيا ہے ؟

جواب کا متن

الحمد للہ:

اونچى ايڑى والے جوتے پہننا جائز نہيں كيونكہ ان سے عورت گر جاتى ہے، اور انسان كو شرعا حكم ہے كہ وہ خطرات سے اجتناب كرے، جيسا كہ عمومى طور پر اللہ تعالى كا حكم ہے:

اور تم اپنے آپ كو قتل مت كرو النساء ( 29 ).

اور ايك مقام پر ارشاد بارى تعالى كچھ اس طرح ہے:

اور تم اپنے ہاتھوں كو ہلاكت ميں مت ڈالو البقرۃ ( 195 ).

اور اسى طرح اونچى ايڑى والا جوتا پہننے سے عورت كا قد اور اس كے سرين اصل سے زيادہ بڑے نظر آتے ہيں، اور ايسا كرنے سے تدليس ہوتى ہے، اور وہ زينت ظاہر ہوتى ہے جس كو ظاہر كرنے سے منع كيا گيا ہے فرمان بارى تعالى ہے:

اور وہ ( عورتيں ) اپنى زينت ظاہر مت كريں، مگر اپنے خاوندوں، يا اپنے باپوں، يا اپنے خسروں، يا اپنے بيٹوں، يا اپنے خاوند كے بيٹوں، يا اپنے بھائيوں، يا اپنے بھانجھوں، يا اپنى عورتوں كے سامنے النور ( 31 ). انتہى.

فتاوى اللجنۃ الدائمۃ للبحوث العلميۃ والافتاء ماخوذ از: مجلۃ البحوث ( 9 / 46 ).

اور اسى طرح اونچى ايڑى والا جوتا پہننے سے عورت آگے كى جانب مائل ہو كر چلتى ہے، تو اس سے خدشہ ہے كہ اس پر وہ وعيد منطبق ہوتى ہے جو مائل كرنے اور مائل ہونے والى عورتوں كو سنائى گئى ہے، اور پھر يہ كمر كو بھى تكليف اور اذيت ديتى ہے، جو كہ ميڈيكل نے بھى ثابت كر ديا ہے، اور اسى طرح اونچى ايڑى والا جوتا ايسى آواز نكالاتا ہے، جس سے مرد متوجہ ہوتے ہيں، اور انہيں فتنہ ميں ڈالتى ہے.

اللہ تعالى ہميں عافيت و سلامتى سے نوازے.

واللہ اعلم .

ماخذ: الشیخ محمد صالح المنجد

تاثرات بھیجیں