منگل 15 شوال 1440 - 18 جون 2019
اردو

كوكا كولا پينے كا حكم

107654

تاریخ اشاعت : 09-08-2008

مشاہدات : 5624

سوال

ميرى سہيلى نے مجھے بتايا ہے كہ كوكا كولا پينا حرام ہے، كيونكہ جب ہم كوكا كولا كى بوتل كو آئينہ ميں ديكھيں تو ہميں لا الہ لا محمد كى عبارت نظر آتى ہے جس كا معنى كوئى معبود نہيں اور محمد نہيں بنتا ہے، اور وہ مجھے يہ بھى كہنے لگى كہ جو بھى اسے پيئے گا وہ مسلمان نہيں، برائے مہربانى اس معاملہ كى وضاحت كريں.

جواب کا متن

الحمد للہ:

كوكا كولا كے متعلق جو يہ كہا جاتا ہے كہ جب اسے آئينہ ميں ديكھا جائے تو لا اللہ لا محمد، يا پھر لا محمد لا مكہ لكھا نظر آتا ہے، يہ صحيح نہيں، اور نہ ہى اس پر كوئى شرعى حكم مرتب ہوتا ہے.

تكلف كرنے اور ايسے وہم سے متعلق ہونے كى كوئى ضرورت نہيں جس كى كوئى دليل نہ ہو.

سب مشروبات اور ماكولات يعنى كھانے پينے كى اشياء ميں جب يہ ثابت ہو جائے كہ وہ مضر ہيں تو يہ حرام ہونگى، ليكن جب ايسا ثابت نہ ہو سكے تو اس ميں اصل يہى ہے كہ وہ حلال ہيں، اور صرف احتمال اور گمان كى بنا پر حرام نہيں ہو گى.

اور جب اسے بنانے والى كمپنى اسلام كے خلاف جنگ كرتى ہو اور اسلام كے دشمنوں كى معاونت كرتى ہو تو اس بنا پر اس كا بائيكاٹ كيا جا سكتا ہے.

واللہ اعلم .

ماخذ: الاسلام سوال و جواب

تاثرات بھیجیں