سوموار 15 رمضان 1440 - 20 مئی 2019
اردو

گاڑى كے ايكسيڈنٹ كى بنا پر ہوش و حواس كھو بيٹھا كيا وہ

22204

تاریخ اشاعت : 05-09-2006

مشاہدات : 5067

سوال

ايك ايسا شخص ہے جو گاڑى كے ايكسيڈنٹ كى بنا پر موت كى كشمكش ميں ہے، اور ايك لمبى مدت خطرے اور بے علمى كى حالت ميں رہا اس مدت ميں رمضان بھى شامل ہے، كچھ مدت كے بعد اللہ كريم نے اسے شفايابى سے نوازا اور وہ روبصحت ہو گيا، چنانچہ اس پر نماز اور روزں كى قضاء كس طرح ہو گى ؟

جواب کا متن

الحمد للہ:

اگر تو واقعتا ايسا ہى ہے جيسا آپ نے بيان كيا ہے كہ ايكسيڈنٹ كى بنا پر ايك طويل مدت اس شخص كے ہوش و حواس قائم نہ رہے ـ اس ميں رمضان المبارك كا مہينہ بھى شامل ہے ـ علماء كرام كے صحيح قول كے مطابق اس كے ذمہ اس كے ہوش و حواس غائب ہونے كى مدت كى كسى قسم كى كوئى قضاء نہيں نہ تو روزے كى اور نہ ہى نماز كى، كيونكہ وہ اس مدت كے دوران مكلف ہى نہ تھا.

اللہ تعالى ہى توفيق بخشنے والا ہے، اور اللہ تعالى ہمارے نبى محمد صلى اللہ عليہ وسلم اور ان كى آل اور صحابہ كرام پراپنى رحمتيں نازل فرمائے.

ماخذ: ديكھيں: فتاوى اللجنۃ الدائمۃ للبحوث العلميۃ والافتاء ( 6 / 18 )

تاثرات بھیجیں