جمعرات 19 جمادی اولی 1440 - 24 جنوری 2019
اردو

بالغ ہوجانےکےباوجود رمضان کےروزےنہیں رکھے

سوال

میں سولہ برس کی نوجوان لڑکی ہوں مجھےتیرہ سال کی عمرمیں حیض آناشروع ہوالیکن اس سال میں نےرمضان کےمکمل روزےنہیں رکھےبلکہ صرف سات روزے رکھے اورمیرے والدین نےبھی مجھ پرسختی نہیں کی کیونکہ ان کاخیال تھاکہ میں مکلف نہیں توکیامیں ان روزوں کورکھوں جوکہ میں نےچھوڑےتھےیاکیاکروں ؟
مجھےاس کےمتعلق بتائیں اللہ تعالی آپ کوجزائےخیرعطافرمائے ۔

جواب کا متن

الحمد للہ :

جب آپ بالغ ہوچکی تھی توآپ کووہ روزے ہرحالت میں رکھنےچاہئیں لڑکی کویاتو حیض یازیرناف بال آجائیں یااحتلام ہوجائےیاپھراسےحمل ہوجائےتووہ بالغ ہوجاتی ہےتو حیض کاوجود بلوغت کےاسباب میں سے ہےاس لئےآپ بالغ اورمکلف ہیں لہذاآپ پررمضان کےروزے رکھناضروری ہیں اوروہ روزے جوآپ نےنہیں رکھےان کی قضاءہرحال میں آپ کے ذمہ ہےآپ اس سےقضاءاورتوبہ کےبغیربری الذمہ نہیں ہوسکتیں اس لئےآپ نےجب روزے ترک کئےہیں اس وقت مکلف تھیں اورآپ کےگھروالوں نےبھی غلطی کی کہ آپ کوکچھ نہیں کہاآپ چھوٹی نہیں بلکہ اس زیادتی پرآپ کوتوبہ کرنی چاہئے  .

ماخذ: فتاوی فضیلتہ الشیخ عبداللہ بن حمیدصفحہ نمبر ۔(176)

تاثرات بھیجیں