بدھ 23 شوال 1440 - 26 جون 2019
اردو

جديد آلات كے ساتھ چاند ديكھنے ميں كوئى حرج نہيں

سوال

كيا صرف آنكھ كے ساتھ چاند ديكھنا ضرورى ہے يا كہ اس كے ليے ہم جديد آلات دوربين وغيرہ استعمال كر سكتے ہيں ؟

جواب کا متن

الحمد للہ:

شرعى دلائل كے ظاہر سے تو يہى ملتا ہے كہ لوگوں كو ان آلات كے ساتھ ديكھنے كا مكلف نہ بنايا جائے، بلكہ صرف آنكھ كے ساتھ ہى چاند ديكھنا ہى كافى ہے.

ليكن جو شخص ان آلات كے ساتھ ديكھتا ہے اور يقين كر ليتا ہے كہ اس نے ان آلات كے ساتھ چاند غروب آفتاب كے بعد ديكھا ہے اور وہ شخص مسلمان اور عادل ہو تو ميرے علم كے مطابق اس كى رؤيت پر عمل كرنے ميں كوئى مانع نہيں.

كيونكہ يہ رؤيت آنكھ كے ساتھ ہے نہ كہ فلكى حساب سے " انتہى

فضيلۃ الشيخ عبد العزيز بن باز رحمہ اللہ .

ماخذ: الاسلام سوال و جواب

تاثرات بھیجیں